پیپلز پارٹی نے ترک صدر کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب پر ہنگامہ آرائی کرنے کا منصوبہ تیار کر لیا، بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے اپوزیشن کو گالیاں دی جاتی ہیں اسی وجہ سے طیب اردگان کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب کے وقت بھی معاملات خراب ہوں گے۔ تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پیپلز پارٹی ترک صدر رجب طیب اردگان کے پاکستانی پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کو متاثر کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔ اس حوالے سے پیپلز پارٹی نے باقاعدہ منصوبہ بندی بھی کی ہے۔ پیپلز پارٹی ممکنہ طور پر طیب اردگان کی پارلیمنٹ آمد اور ان کے خطاب کے دوران ہنگامہ آرائی کر سکتی ہے۔ اس حوالے سے پارٹی چئیرمین بلاول بھٹو نے بھی معنی خیز انداز میں دھمکی دی ہے کہ اگر پارلیمنٹ میں حکومت اپوزیشن کو گالیاں دے گی تو پھر ترک صدر کے خطاب کے دوران بھی معاملات خراب ہو سکتے ہیں ۔ واضح رہے کہ ترک صدر رجب طیب اردوان کل بروز جمعرات کو اسلام آباد پہنچیں گے۔ ترک صدر کا دورہ پاکستان دو روزہ ہو گا۔ ترک صدر رجب طیب اردوان کے ہمراہ ایک بڑا وفد بھی ہو گا،ترک صدر کے ہمراہ وفد میں سرمایہ کار اورکاروباری شخصیات بھی پاکستان پہنچیں گی،ترک صدر پاکستان میں سرمایہ کاری سمیت کئی منصوبوں کی یادداشت مفاہمت پر دستخط کریں گے،دورہ پاکستان کے دوران ترک صدر وزیراعظم عمران خان،صدر مملکت عارف علوی، اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اور چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے ملاقاتیں کریں گے،ان ملاقاتوں میں باہمی تعاون کے فروغ، دفاعی تعاون میں بہتری،افغانستان میں قیام امن، مشرق وسطیٰ کی صورتحال،سمیت باہمی سرمایہ کاری میں اضافہ پر تبادلہ خیال کیا جائیگا۔ اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے مطابق ترک صدر رجب طیب اردوان دورہ پاکستان کے دوران 14 فروری کو پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے خطاب بھی کریں گے۔ 147

پیپلز پارٹی نے ترک صدر کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب پر ہنگامہ آرائی کرنے کا منصوبہ تیار کر لیا

حکومت کی جانب سے اپوزیشن کو گالیاں دی جاتی ہیں اسی وجہ سے طیب اردگان کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب کے وقت بھی معاملات خراب ہوں گے: بلاول بھٹو
پیپلز پارٹی نے ترک صدر کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب پر ہنگامہ آرائی کرنے کا منصوبہ تیار کر لیا، بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے اپوزیشن کو گالیاں دی جاتی ہیں اسی وجہ سے طیب اردگان کے پارلیمنٹ سے مشترکہ خطاب کے وقت بھی معاملات خراب ہوں گے۔ تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ پیپلز پارٹی ترک صدر رجب طیب اردگان کے پاکستانی پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کو متاثر کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔
اس حوالے سے پیپلز پارٹی نے باقاعدہ منصوبہ بندی بھی کی ہے۔ پیپلز پارٹی ممکنہ طور پر طیب اردگان کی پارلیمنٹ آمد اور ان کے خطاب کے دوران ہنگامہ آرائی کر سکتی ہے۔ اس حوالے سے پارٹی چئیرمین بلاول بھٹو نے بھی معنی خیز انداز میں دھمکی دی ہے کہ اگر پارلیمنٹ میں حکومت اپوزیشن کو گالیاں دے گی تو پھر ترک صدر کے خطاب کے دوران بھی معاملات خراب ہو سکتے ہیں ۔
ترک صدر رجب طیب اردوان بروز جمعرات کو اسلام آباد پہنچیں گے۔ ترک صدر کا دورہ پاکستان دو روزہ ہو گا۔ ترک صدر رجب طیب اردوان کے ہمراہ ایک بڑا وفد بھی ہو گا،ترک صدر کے ہمراہ وفد میں سرمایہ کار اورکاروباری شخصیات بھی پاکستان پہنچیں گی،ترک صدر پاکستان میں سرمایہ کاری سمیت کئی منصوبوں کی یادداشت مفاہمت پر دستخط کریں گے،دورہ پاکستان کے دوران ترک صدر وزیراعظم عمران خان،صدر مملکت عارف علوی، اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اور چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کے ملاقاتیں کریں گے،ان ملاقاتوں میں باہمی تعاون کے فروغ، دفاعی تعاون میں بہتری،افغانستان میں قیام امن، مشرق وسطیٰ کی صورتحال،سمیت باہمی سرمایہ کاری میں اضافہ پر تبادلہ خیال کیا جائیگا۔
اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے مطابق ترک صدر رجب طیب اردوان دورہ پاکستان کے دوران 14 فروری کو پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے خطاب بھی کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں