ہزاروں ہندؤں کا اسلام قبول کرنے کااعلان 194

ہزاروں ہندؤں کا اسلام قبول کرنے کااعلان

ذات پات میں تقسیم ہندؤ مذہب ہماری زندگیوں کی پروا نہیں کرتا، مزید قربانیاں نہیں دے سکتے،3ہزار ہندؤ اگلے ماہ اسلام قبول کرلیں گے،دلتو ہندو

تامل ناڈو: بھارت میں ذا ت پات کی بنیاد پر امتیازی سلوک کے بعد ہزاروں ہندوٴں نے اسلام قبول کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔ ایک رپورٹ کے مطابق بھارتی ریاست تامل ناڈو میں تین ہزار سے زائد ہندوں نے جنوری میں اسلام قبول کرنے کا اعلان کردیا ہے۔ ہندو دلتوں نے فیصلہ ذات پات کی بنا پر امتیازی سلوک اور ذہنی دباوٴ کیساتھ ساتھ ہونے والے تشدد کے باعث کیا۔
واضح رہے دلتوں کو میتوپالام میں اونچی ذات کے ہندوں سے دور رکھنے کیلئے دیوار بھی تعمیر کی گئی تھی، جو بارشوں کے باعث گرجانے سے 17 ہندو دلتو ہلاک ہو گئے تھے۔ اس دیوار کو ذات کی دیوار کہا جاتا تھا۔ ہندو دلتوں کا کہنا ہے کہ ہمیں امتیازی سلوک کا سامنا ہے، بہت سے مصائب برداشت کرنے کے بعدمزید برداشت کی سقط ختم ہو گئی ہے، اگلے ہی ماہ تین ہزار ہندواسلام قبول کر لیں گے۔
ان کا کہنا تھا کہ ہندو مذہب ہماری زندگیوں نہیں کرتا اس کے لئے قربانیاں دینے کا کوئی فائدہ نہیں۔ واضح رہے اسلام میں تمام مسلمانوں کو ایک طرح کے حقوق حاصل ہیں۔ جس سے متاثر ہونے کے باعث 3 ہزار سے زائد دلتو ہندو اگلے ماہ اسلام قبول کریں گے۔ تاہم بھارت میں ہندوں کو کئی درجات میں تقسیم کیا گیا ہے ، کچھ نسلوں کو برتری دی گئی ہے جب بہت سی ذاتوں کو نیچ سمجھا جا تاہے۔
یاد رہے اس سے قبل بھی بھارت میں ذات پات سے متعلق ایک رپورٹ سامنے آئی تھی ۔ خفیہ رپورٹ منظر کےمنظرعام پر آنے کے بعد مودی سرکار کی رہی سہی ساکھ بھی ختم ہو گئی ۔ نوجوانوں میں فوج جوائن کرنے کا رجحان تقریباً ختم ہو گیا۔ انڈین ملٹری انٹیلی جنس کی خفیہ رپورٹ میں انکشاف ہوا تھا کہ بھارتی فوج کا مورال تاریخ کی کم ترین سطح پر ہے۔رپورٹ کے مطابق بھارتی فوج میں مذہب اور ذات پات کی بنیاد پر افسران اور جوان ایک دوسرے کے قریب آنے سے کترانے لگے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں