لاہور ہائیکورٹ کا راناثناء اللہ کو رہا کرنے کا حکم عدالت کا لیگی رہنما رانا ثناء اللہ کو 10,10 لاکھ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا 213

لاہور ہائیکورٹ کا راناثناء اللہ کو رہا کرنے کا حکم عدالت کا لیگی رہنما رانا ثناء اللہ کو 10,10 لاکھ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا

لاہور ہائیکورٹ کا راناثناء اللہ کو رہا کرنے کا حکم
عدالت کا لیگی رہنما رانا ثناء اللہ کو 10,10 لاکھ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا
لاہور ہائیکورٹ نے مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثناء اللہ کی ضمانت منظور کر لی ہے۔تفصیلالت کے مطابق لاہور ہائیکورٹ میں رانا ثناء کے خلاف منشیات برآمدگی کیس کی سماعت ہوئی۔لاہور ہائیکورٹ نے رانا ثناء اللہ کی ضمانت کی درخواست منظور کر لی ہے۔عدالت نے رانا ثناء اللہ کو 10,10 لاکھ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا ہے۔
گزشتہ روز سماعت کے دوران رانا ثنااللہ کے وکلاء اور اے این ایف کے پراسیکیوٹر نے دلائل دئیے جس کے بعدعدالت بعد نے فیصلہ محفوظ کرلیا جو آج سنایا گیا۔واضح رہے کہ اس سے قبل ستمبر کے مہینے میں رانا ثناء اللہ کی رہائی کی درخواست ضمانت مسترد کر دی گئی تھی۔ جس کے بعد اُن کی اہلیہ نے ہائیکورٹ جانے کااعلان کیا تھا۔
اہلیہ رانا ثنا اللہ کا کہنا تھا کہ ضمانت منسوخی کے خلاف ہائیکورٹ جاوٴں گی، مجھے اْمید ہے کہ انصاف ملے گا۔

انہوں نے کہا کہ ان غریبوں کی جان چھوٹی جو ناجائز پکڑے ہوئے تھے، ان کی بھی اللہ مدد کرے گا۔ یاد رہے کہ یکم جولائی کو مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثناء اللہ کو گرفتار کر لیا گیا تھا۔ترجمان اے این ایف ریاض سومرو نے رانا ثنا ء اللہ کی گاڑی سے منشیات برآمد ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔رانا ثنا اللہ خان کی گاڑی سے منشیات کی بھاری مقدار برآمد ہوئی اور ان کے خلاف نارکوٹکس ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا جس کے بعد سے وہ جسمانی ریمانڈ پر جیل میں قید ہیں۔
رانا ثناء اللہ کی گرفتاری کے بعد ان کی اہلہ بھی میدان میں آگئی تھیں اور انہوں نے اپنے کئی بیانات میں موجودہ حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔ تاہم اب شوہر کی درخواست ضمانت مسترد ہونے کے بعد انہوں نے ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں