اسلامی تعاون تنظیم کا بھارتی شہریت کے قوانین پرتشویش کا اظہار 180

اسلامی تعاون تنظیم کا بھارتی شہریت کے قوانین پرتشویش کا اظہار

موجودہ صورتحال سے مسلمان اقلیت متاثر ہو رہی ہے، بھارت میں مسلم اقلیتوں اور اسلامی عبادت گاہوں کا تحفظ یقینی بنایا جائے۔ او آئی سی سیکرٹریٹ کا مطالبہ
سلامی تعاون تنظیم (اوآئی سی) نے بھارتی شہریت کے قوانین پر تشویش کا اظہار کر دیا۔ اوآئی سی نے مطالبہ کیا کہ بھارت میں مسلم اقلیتوں اور اسلامی عبادت گاہوں کا تحفظ یقینی بنایا جائے، موجودہ بھارتی صورتحال سے مسلمان اقلیت متاثر ہو رہی ہے۔ او آئی سی سیکرٹریٹ کے مطابق اوآئی سی کو بھارتی شہریت کے قوانین پر تشویش ہے۔
اوآئی سی نے کہا کہ بھارت کی موجودہ صورت حال سے مسلمان اقلیت متاثر ہو رہی ہے۔ او آئی سی نے بابری مسجد کے کیس کے معاملے پر بھی تشویش کا اظہار کیا۔ او آئی سی سیکرٹریٹ نے کہا کہ او آئی سی بھارت میں مسلم اقلیتوں اور اسلامی عبادت گاہوں کے تحفظ کا مطالبہ کرتی ہے۔ دوسری جانب وزیر خارجہ پاکستان مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ مودی سرکار خطرناک کھیل، کھیل رہی ہے جس سے پورے خطے کا امن متاثر ہو رہا ہے۔
بھارت میں اس وقت امتیازی قانون ”متنازع شہریت بل 2019 ” کے خلاف ہندوستان کی دس سے زیادہ ریاستوں میں شدید احتجاج ہو رہے ہیں، ہندوستان کی پوری اپوزیشن سراپا احتجاج ہے۔ تمام اقلیتیں، بالخصوص مسلمان اس بل کے خلاف احتجاج کر رہے ہیں اور مقبوضہ کشمیر کی صورتحال آپ کے سامنے ہے، مسلسل کرفیو کو آج ایک سو انتالیس (140) دن ہو چکے ہیں۔وزیر خارجہ نے کہا کہ اس ساری صورتحال سے توجہ ہٹانے کیلئے ہندوستان کوئی فالس فلیگ آپریشن بھی کر سکتا ہے ، لائن آف کنٹرول پر انکی طرف سے اشتعال انگیزیوں کا سلسلہ بھی جاری ہے،میں نے دو روز قبل بھی بھارت کو متنبہ کیا تھا کہ پاکستان امن پسند ملک ہے لیکن اگر بھارت نے کوئی ایسی حرکت کی تو اسے مناسب اور بھرپور جواب ملے گا۔
انہوں نے کہا کہ کل جو بھارت نے اشتعال انگیزی کی اس پر ہماری فورسز نے الحمدللہ بھرپور جواب دیا ہے جس میں ان کی ہلاکتیں بھی ہوئی ہیں اور انکی چوکیوں کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے،ہم اب بھی یہی کہیں گے کہ دنیا کو اس صورتحال کا نوٹس لینا چاہئے کیونکہ مودی سرکار خطرناک کھیل، کھیل رہی ہے جس سے پورے خطے کا امن متاثر ہو رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں