چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے اپنے کیرئیر کاآخری مقدمہ نمٹا دیا 213

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے اپنے کیرئیر کاآخری مقدمہ نمٹا دیا یہ میرا عدالتی کیریئر کا آخری مقدمہ ہے، سب کے لئے نیک خواہشات ہیں، آصف سعید کھوس

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے اپنے کیرئیر کاآخری مقدمہ نمٹا دیا
یہ میرا عدالتی کیریئر کا آخری مقدمہ ہے، سب کے لئے نیک خواہشات ہیں، آصف سعید کھوس
چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے اپنے کیرئیر کاآخری مقدمہ نمٹا دیا۔ تفصیل کے مطابق چیف جسٹس نے مری میں آمنہ نامی خاتون پر فائرنگ کا واقعہ نمٹا دیا ۔ ساجد راشد اور قدر نے گھر جا کر فائرنگ کی تھی۔ کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس نے کہا کہ معاملے پر کوئی رائے نہیں دے رہے کیونکہ ابھی ٹرائل چل رہا ہے ۔
خاتون کو ملزموں کی ضمانت پر اعتراض ہے۔ ضمانت کے بعد معاملات خراب ہوئے ۔ بیان دینے سے پہلے سوچنا چاہیے تھا۔یہ میرا عداتی کیریئر کا آخری مقدمہ ہے۔ سب کے لئے نیک خواہشات ہیں۔ یاد رہے سپریم کورٹ آف پاکستان کے موجودہ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ 20 دسمبر کو عہدے سے ریٹائرڈ ہو رہے ہیں چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے 18جنوری 2019ء کو چیف جسٹس کا عہدہ سنبھالا تھا۔
جبکہ سنیارٹی اور مدت ملازمت کے لحاظ سے اگلے چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس گلزاراحمد ہوں گے وہ 21 دسمبر کو عہدے کا حلف اٹھائیں گے اور دو سال چیف جسٹس رہنے کے بعد یکم جنوری 2022ء کو عہدے سے سبکدوش ہوں گے، ان کے بعد مسٹر جسٹس عمر عطائ بندیال 2 فروری 2022ء کو بطور چیف جسٹس سپریم کورٹ آف پاکستان کا عہدہ سنبھالیں گے۔ وزارت قانون نے نئی تقرری کے لئے سمری وزیراعظم کو ارسال کی جا چکی تھی ۔
واضح رہے چیف جسٹس آف پاکستان نے اپنے کیرئیر میں بہت سے اہم کیسز کا فیصلہ دیا اور واضح رہے گزشتہ روز پرویز مشریف کیخلاف آنے والا فیصلہ بھی چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کے بنائے گئے بینچ نے دیا، جس میں پرویز مشرف کو سزائے موت کی سزا سنا دی، اس آگے بڑھ کر جسٹس وقار سیٹھ نے لکھا کہ اگر پرویز مشرف کی موت واقعہ ہو جائے تو اس کو ڈی چوک میں تین دن تک پھانسی پر لٹکایا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں